پی سی بی اور پی ایس ایل کی فرنچائزیاں نئی ​​مالیاتی تفہیم پر متفق ہیں

پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) اور پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کی فرنچائزز کے مابین مالی تنازع ختم ہونے والا ہے کیونکہ دونوں فریق ایک نئے معاہدے پر دستخط کرنے کے قریب ہیں۔ ذرائع کے مطابق پی ایس ایل کی کچھ فرنچائز کی جانب سے سالانہ فیس جمع کروانے میں ظاہر کی جانے والی ہچکچاہٹ کے بعد دونوں فریقوں نے پیر کے روز اجلاس میں تفصیلی بات چیت کی اور اب ایک نئے مالیاتی پیکیج پر اتفاق کیا گیا ہے۔

پی سی بی کے چیئرمین احسان مانی کی صدارت میں ہونے والے اس اجلاس میں اسلام آباد یونائیٹڈ کے مالک علی نقوی اور کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے مالک ندیم عمر کو چھوڑ کر تمام پی ایس ایل فرنچائز مالکان نے شرکت کی۔ ایک فرنچائز مالک نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ ‘ہم سمجھتے ہیں کہ پی سی بی کی جانب سے پیش کردہ نیا مالیاتی پیکیج اچھا ہے اور اس کا مقصد تنازعہ کو حل کرنا ہے، ہم نے اس پیکیج پر اتفاق کیا ہے جو اگلے 50 سالوں کے لیے معاہدہ ہوگا۔

یہ فریقین کے لئے جیت کی صورتحال ہے کیونکہ فرنچائزز کو منافع میں کم حصہ ملے گا اور پی سی بی نے سالانہ فیس ختم کرنے کا وعدہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اگرچہ ابھی اس معاہدے کو حتمی شکل دینا باقی ہے لیکن پی سی بی کی جانب سے اجلاس میں پیش کردہ مالی پیکج وہی تھا ،اگرچہ کسی کو یہ علم نہیں کہ آگے کیا ہونا ہے لیکن ہم نے اجلاس کے دوران پی سی بی کے پیش کردہ نئے پیکیج پر اتفاق کیا ہے۔ امید ہے کہ اس کا باضابطہ اعلان کچھ ہی دن میں ہوجائے گا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Pin It on Pinterest

%d bloggers like this: